گلوں میں رنگ بھرے بادِ نوبہار چلے

  • Work-from-home

AnadiL

••●∂ιѕαѕтєя●••
VIP
Nov 24, 2012
72,918
23,237
1,313
گلوں میں رنگ بھرے بادِ نوبہار چلے
گلوں میں رنگ بھرے بادِ نوبہار چلے
چلے بھی آؤ کہ گلشن کا کاروبار چلے

جو ہم پہ گذری سو گذری مگر شبِ ہجراں
ہمارے اشک تیری عاقبت سنوار چلے

قفس اداس ہے یارو کوئی صبا سے کہو
کہیں سے بہرِ خدا آج ذکرِ یار چلے

چلا جو تیرِ نظر بے ہدف تو کیا حاصل
مزہ تو جب ہے کہ سینے کے آر پار چلے

مقام فیض کوئی راہ میں جچا ہی نہیں*
جو کوئے یار سے نکلے تو سوئے دار چلے
 
Top