ISHQ DA ROAG

  • Work-from-home

Angela

♡~Loneliness Forever~♡
Administrator
Apr 29, 2019
6,438
2,436
513
♡~Dasht e Tanhayi~♡
Ap nah jaaye ga TM soona ho jaaye ga
yeh khoob kahi aap ney.. :oops: .. matlab yahan koi ho na aur hum TM k ghutnon sey lagey bethey rahain :oops:
hum tou soch rahey they k aik thread lgayen... aur us ka unwaan rakhain, khabardaaaaaaaaaar...yahan koi naa aye yeh hum logon ka TM hai...
aur neechey un teen char masoom (ba-shamool hum ;) ) aur bechaarey (hmain nikaal k 🤭 ) logon ka naam lik dain jo yahan aik do chakkar lga jaatey hain... :oops:
 
  • Like
Reactions: minaahil

minaahil

Queen of dreams
Super Star
Jan 11, 2014
6,997
4,327
1,313
Dream land
yeh khoob kahi aap ney.. :oops: .. matlab yahan koi ho na aur hum TM k ghutnon sey lagey bethey rahain :oops:
hum tou soch rahey they k aik thread lgayen... aur us ka unwaan rakhain, khabardaaaaaaaaaar...yahan koi naa aye yeh hum logon ka TM hai...
aur neechey un teen char masoom (ba-shamool hum ;) ) aur bechaarey (hmain nikaal k 🤭 ) logon ka naam lik dain jo yahan aik do chakkar lga jaatey hain... :oops:
Haan g Ap TM k sath hi rahye taa k ap ko daikh kar sub loat aayen
 

Blue-Black

chai-mein-biscuit
TM Star
May 27, 2014
1,922
607
1,213
KARACHI
لوگوں کو جب لکھنے کو کچھ نہیں ملتا تو اپنی حاضری کو یقینی بنانے کے لئے ساگ، دال، پراٹھے، چکن کڑاہی کی پکس لگا رہے ہوتے ہیں بلکہ ہمسایوں نے جو کچھ پکایا ہوتا .ہے وہ بھی لے آتے ہیں​
 

shehr-e-tanhayi

Super Magic Jori
Administrator
Jul 20, 2015
39,700
11,682
1,313
کہڑا کہڑا رونا روئیے، سارے روگ اولے نے
زوراور نے ساڈے گھر دے پرچھاویں وی ملے نے

اس دنیاں دی بھیڑ دے اندر جس پاسے وی تکدے ہاں
اک دوجے دے نیڑے وسدے ٹاپو انج اکلے نے

قاصد دیکھاں، چٹھی دیکھاں، کوساں اپنے لیکھاں نوں
موت سرھانے آ کے بیٹھی، ہن سنیہڑے گھلے نے

چنگا ہندا کجھ نہ ہندا، نہ اوہ ہندا، نہ میں ہندا
جنہاں لئی ایہہ دنیاں چھڈی، اوہ سانوں چھڈّ چلے نے

اگّ پرائی نہ پئے سیکو، جھاتی مارو اندر دیکھو
جو لگی اے اک گھر 'واسف' سارے اس وچّ بلے نے
 

Angela

♡~Loneliness Forever~♡
Administrator
Apr 29, 2019
6,438
2,436
513
♡~Dasht e Tanhayi~♡
کہڑا کہڑا رونا روئیے، سارے روگ اولے نے
زوراور نے ساڈے گھر دے پرچھاویں وی ملے نے

اس دنیاں دی بھیڑ دے اندر جس پاسے وی تکدے ہاں
اک دوجے دے نیڑے وسدے ٹاپو انج اکلے نے

قاصد دیکھاں، چٹھی دیکھاں، کوساں اپنے لیکھاں نوں
موت سرھانے آ کے بیٹھی، ہن سنیہڑے گھلے نے

چنگا ہندا کجھ نہ ہندا، نہ اوہ ہندا، نہ میں ہندا
جنہاں لئی ایہہ دنیاں چھڈی، اوہ سانوں چھڈّ چلے نے

اگّ پرائی نہ پئے سیکو، جھاتی مارو اندر دیکھو
جو لگی اے اک گھر 'واسف' سارے اس وچّ بلے نے
ہائے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ چنگا ہندا کجھ نہ ہندا 💔۔
 

shehr-e-tanhayi

Super Magic Jori
Administrator
Jul 20, 2015
39,700
11,682
1,313

سارے اکو رنگ دے لوک ۔
وکھو-وکھو کی منگدے لوک ؟

مٹی دی مورت دے کولوں
حق منگدے کیوں سنگدے لوک ؟

ڈاڈھا دیکھ کے کرن سلاماں
ماڑا دیکھ کے کھنگھدے لوک ۔

جہڑا حق دی 'واز لگاوے
پھڑ سولی تے ٹنگدے لوک ۔

منزل میری میتھوں پچھے
کتھے رہِ گئے سنگ دے لوک ؟

'واصف' رہندا 'تخت-ہزارے'
چنگے لگدے 'جھنگ' دے لوک ۔
 
  • Like
Reactions: Angela

Angela

♡~Loneliness Forever~♡
Administrator
Apr 29, 2019
6,438
2,436
513
♡~Dasht e Tanhayi~♡

سارے اکو رنگ دے لوک ۔
وکھو-وکھو کی منگدے لوک ؟

مٹی دی مورت دے کولوں
حق منگدے کیوں سنگدے لوک ؟

ڈاڈھا دیکھ کے کرن سلاماں
ماڑا دیکھ کے کھنگھدے لوک ۔

جہڑا حق دی 'واز لگاوے
پھڑ سولی تے ٹنگدے لوک ۔

منزل میری میتھوں پچھے
کتھے رہِ گئے سنگ دے لوک ؟

'واصف' رہندا 'تخت-ہزارے'
چنگے لگدے 'جھنگ' دے لوک ۔
واصف صاحب کی شاعری دل کو ٹھا کر کے لگدی ;)۔
 

Armaghankhan

Likhy Nhi Ja Sakty Dukhi Dil K Afsaany
Super Star
Sep 13, 2012
10,433
5,571
1,313
KARACHI
کسی بھی زبان کا ترجمہ کرنا۔۔خاص طور پہ شاعری کا ۔۔۔ آسان کام نہیں رہا ہے۔۔ کیونکہ کہا جاتا ہے کہ ترجمہ پکی ہوئی سٹرابری کی طرح ہوتا ہے۔۔۔ جس کا وہ ذائقہ، وہ شیرنی اور چاشنی نہیں رہتی۔۔۔ ویسے بھی اگر مفہوم کو کھل کے بیان کرنا پڑ جائے تو وہ مزا بھی نہیں رہتا۔۔۔ نہ ہی وہ خوبصورتی۔۔لیکن چونکہ اب بعض لوگ بہت سی زبانیں نہیں جانتے تو یہ ایک ناگزیر عمل ہے۔۔۔۔کہ ایک زبان کو دوسری زبان میں ڈھالا جاتا ہے۔۔۔

تنہائی آپا ہم یہاں ترجمہ کرتے دیتے ہیں تمام پوسٹ کردہ اشعار کا۔۔تا کہ دوسروں کو آسانی رہے۔۔۔ آپ دیکھ لیجیئے کا اگر کوئی غلطی ہوئی ہماری۔۔۔ کیونکہ پنجابی کے بہت سارے لفظ ایسے ہوتے جنہیں اردو یا انگلش میں ترجمہ کرتے ہوئے مشکل ہو جاتی ہے۔۔اور ویسے بھی کبھی اچانک ترجمہ کرتے مطلوبہ لفظ ذہن میں نہیں آتا، چاہے وہ آتا ہی کیوں نہ ہو۔۔۔ہم یہاں صرف نثر کریں گے یعنی لفظی ترجمہ۔۔تشریح میں نہیں جائیں گے۔۔۔ کیونکہ سارے سمجھدار ہیں (ہمارے خیال میں ۔۔اب حقیقت اللہ جانے ) تو مفہوم سمجھ جائیں گے۔۔۔



مایا کو مایا ملے کر کر لمبے ہاتھ
تلسی داس غریب کی کوئی نہ پوچھے ذات


جہاں پہلے سے دولت ہو وہاں ہی مزید دولت آتی ہے۔۔۔ اور بیچارے غریب تلسی داس کا حال کوئی نہیں پوچھتا۔۔۔

تلسی داس رامائن کے مصنف تھے ۔۔ یہاں انہوں نے تخلص کے طور پہ نام لیا ہے۔۔۔ اس شعر کو ہندی کہاوت کے طور پر استعمال کیا جاتا ہے۔


نیند نہ ویکھے بستر ، تے بھک نہ ویکھے ماس
موت نہ ویکھے عمر نوں تے عشق نہ ویکھے ذ ات


نیند بستر نہیں دیکھتی۔ہر حآل میں آجاتی ہے ۔مطلب وہ جو کہتے ہوتے ہیں کہ نیند کانٹوں پہ بھی آ جاتی۔۔۔ (لیکن ہمارے خیال میں یہ کچھ لوگوں پر ہی اپلیکیبل ہوتی ہے۔۔ بہت سے لوگوں کو پھولوں پہ بھی نیند نہیں اتی😟 )بھوک بھی حالات اور جسمانی صحت نہیں دیکھتی۔۔۔ بھوک لگنا فطری بات ہے۔

اسی طرح موت کا کوئی اصول نہیں۔۔۔ وہ عمر سے بالاتر جب چاہے جس کو چاہے آ جاتی۔😟 اور عشق کے بارے میں تو یہ بات مشہور ہے کہ یہ ذات پات یا کسی بھی تفریق کو نہیں دیکھتا۔۔۔ عشق ہوتا ہے، یا ہوتا ہے یا ہوتا ہی نہیں۔۔بس یہی بیان کیا اس شعر میں۔




عشق دے روگ دا کِتے نہ دارُو عشق دے روگ اوَلّے
عقلاں شکلاں والے کیتے عشق نے کملے جھلے


عشق کے روگ بھی بہت عجیب ہوتے ہیں۔۔اس مرض کی کہیں دوا نہیں ہے
عشق نے اچھے بھلے عقلمندوں کی ہوش بھلا رکھی ہے

تنہائی آپا وہ کیا شعر ہے بھلا۔۔۔ہماری فیورٹ ٹ ٹ ٹ غزل کا شعر۔۔۔

عشق بے گھر کرے، عشق بے در کرے، عشق کا سچ ہے کوئی ٹھکانا نہیں
ہم جو کل تک ٹھکانے کے تھے آدمی، آپ سے مل کے کیسے ٹھکانے لگے😜 ۔



عشق تے آتش دوہیں برابر
تے عشق دا تا تکھیرا


عشق اور آگ دونوں برابر ہیں۔

دوسرے مصرع میں ''تا'' سینک کو کہتے ہیں۔ اور ''تُکھیڑا'' کہتے ہیں دھواں والی آگ کو۔۔۔ تنہائی آپا۔۔۔ آپ کو پتہ ہی ہو گا بعض اوقات پنجابی میں کہا جاتا ہے کہ یہ چیز ''تُکھ'' رہی ہے۔۔ مطلب کعئی چیز اس طرح جلے کہ اندر ہی اندر راکھ بنتی رہے۔۔اور اس میں سے کڑوا دھواں بھی اٹھے۔۔۔ اس کے جلنے کو تکھیڑا کہتے ہیں۔ جیسے کیمیسٹری میں ٹرم ہوتی ہے۔۔ کنٹرولڈ کمبسچن۔ controlled or limited combustion

تو ترجمہ آپ کو سمجھ آ ہی گیا ہو گا کہ۔۔۔۔ عشق اور آگ ویسے تو دونوں برابر ہی ہیں۔۔۔لیکن عشق کی تپش بڑی جلن والی ہوتی ہے۔۔جو اندر ہی اندر دہکتی رہتی ہے۔۔۔😕 ۔


آتش ساڑھے ککھ تے کانے
عشق ساڑے تن میرا


آگ تنکے اور کانے (بانس ٹائپ چیز) جلاتی ہے
لیکن عشق میرے تن بدن کو جلاتا ہے


آتش بجھدی نال پانی
تے عشق دا دارو کیہڑا؟


آگ تو پانی کے ساتھ بجھ سکتی ہے
😕 لیکن کیا عشق کی دوا کوئی ہو سکتی؟


غلام فریدا اوتھے کچھ نئی بچدا
جتھے عشق نے لا لیا ڈیرا


غلام فرید ( شاعر کا نام) وہاں کچھ نہیں بچتا
جہاں عشق ڈیرے ڈال لے



تیرے ہجر وچ پیاریا کی دساں
لگدی اکھ نہ آوندے خواب مینوں


اے محبوب کیا بتاؤں کہ تمہاری جدائی میں کیا حالت ہو گئی ہے
رات کو آنکھ نہیں لگدی،( نیند نہیں آتی) نہ اب کوئی خواب آتا ہے۔۔


ساعتاں لبدا پھراں وصال دیاں
یاد طلب دے نہ رہے آداب مینوں


میں ملنے اور وصال کے لمحے ڈھونڈتا پھرتا ہوں
اور اس میں اس قدر شدت ہے، کہ مجھے یہ بھی یاد نہیں رہا ہے کہ طلب، یعنی مانگنے کے بھی کوئی آداب ہوتے ہیں

علامہ اقبال کا بڑا زبردست قسم کا شعر ہے۔۔جو ہمارا پسندیدہ ترین ہے۔۔۔

خاموش اے دل، بھری محفل میں چلانا نہیں اچھا
ادب پہلا قرینہ ہے محبت کے قرینوں میں



ہائے وچارے عاشق☹ ۔۔ کرن تے کی کرن۔۔😂 ۔نہ اِدھر دے نہ اُدھر دے۔۔😂 ۔

اللہ بچائے اس مرضِ عشق سے
کہتے ہیں یہ عارضہ اچھا نہیں ہوتا

😜

شب نوں کَرن پئے تارے راہبری میری
صبح راہ دسدا آفتاب مینوں


یہاں بے قراری ، بے چینی، اور شب بیداری کو واضح کیا گیا ہے۔۔۔ کہ میں تمہارے وصال کی تمنا میں ہر وقت بے چین رہتا ہوں۔۔ اور اس سفر میں رات کو تارے میری رہبری کرتے ہیں۔۔اور میرے ساتھ جاگتے ہیں۔ دن میں سورج کے تعاقب میں چلتا ہوں ۔۔یعنی یہاں یاد کا سفر دکھایا گیا ہے کہ کب وصل کی منزل ملے۔۔۔

اتھرو خون دے اکھیاں توں،
گر کے دامن تے کرن بیتاب مینوں😢 ۔


ہائے ہائے۔۔۔ بڑی ای ماڑی حالت اے۔😟 😄 ۔۔ یہ سیویر کنڈیشن ہے محبت اور انتظار کی۔۔۔ بیان کیا جا رہا ہے کہ میں اس قدر رویا ہوں کہ اب آنکھ کے آنسو خشک ہو گئے ہیں اور خون ،آنسو کی صورت اختیار کرتے ہوئے میرے دامن کو بھگو دیتا ہے۔۔۔ بے چینی، بے قراری، انتظار اور اذیت۔۔۔ سب چھپا ہے اس شعر میں۔۔۔😢۔





اُچّا ہسیاں، جان نہ چھڈّے، مگروں دھڑکا رووَن دا.😢 ۔
اس فقرے کا مطلب یہ ہے کہ اگر بھول چوک سے بندہ اونچی آواز میں ہنس بھی لے تو بعد میں رونے کا خدشہ رہتا ہے۔یہ ایک شعر کا مصرع لکھا تھا ہم نے۔



یارا ڈک لے خونی اکھیاں نوں
سانوں ہنس ہنس مار مکایا جے


اے دوست، اپنی ان خونخوار آنکھوں (جوکنگ)😂 ۔
یہاں خونی سے مراد قاتل ہے۔۔۔ جیسے وہ کہتے نہیں قاتل انکھیاں۔۔۔ یا وہ بڑا مزے کا شعر ہے۔۔فیورٹ ہے۔

نظر سے قتل کر ڈالو، نہ ہو تکلیف دونوں کو
😜 تمہیں خنجر اٹھانے کی، ہمیں گردن جھکانے کی

ااوہو۔۔ شعر کا ترجمہ تو وہیں رہ گیا۔۔۔ترجمہ ہے کہ اپنی ان قاتل آنکھوں کو روک لو۔۔۔ تماری ہنسی ہماری جان لے رہی ہے۔۔۔ (اب یہ مت سمجھیئے گا کہ یہاں شاعر، اپنے محبوب کی ہنسی سے جیلس ہو رہا ہے۔۔۔😂 )



دل،جان'جگر زخمی کیتا
نظراں دا تیر چلایا اے


آہم۔۔۔ آگے ہے کہ تم نے نظروں کے تیر ایسے چلائے کہ ہمارا دل، جان اور جگر زخمی ہو گیا۔۔۔

جب نظروں کے تیر سیدھے دل پر اثر انداز ہوں تو بڑے بڑے ہوش بھلا بیٹھتے۔😄 ۔ اللہ معاف کرے۔۔ کنج دا ترجمہ کروا رئے او ساڈے کولوں۔۔😄 ۔

میکش ناگپوری کہتے ہیں
خاطرِ مجروح لیتا ہے مزہ تاثیر کا😟 ۔
😕 زخم بھرتا ہی نہیں، ان کی نظر کے تیر کا




میرے عشق دے وچہ مشکوک نہ ہو
نیئں اج تک غلط نگاہ کیتی


میرے عشق کے بارے میں کچھ شک نہ کرو۔۔۔
میں نے آج تک کوئی غلط نظر نہیں کی


تیری ہر ملاقات میں انج کیتی
جیویں موسی نال خدا کیتی


میں نے تمہارے ساتھ ہر ملاقات اس ادب، پاکیزگی اور نیک نیتی سے کی ہے، جیسے حضرت موسی علیہ السلام نے خدائے بزرگ و برتر سے کی تھی۔

نئیں فرق کیتا تیری پوجا وچہ
نئیں خطریاں دی پرواہ کیتی


تمہیں چاہنے میں کوئی فرق روا نہیں رکھا
نہ ہی کسی خطرے کی پرواہ کی


اک تینوں رب نئیں کہہ سکدا
باقی ساری رسم ادا کیتی


بس تمہیں خدا نہیں کہہ سکتے
ورنہ ہر رسم ادا کر دی ہے۔۔۔

یہ صوفیانہ شعر ہے۔۔بہت سے لوگ اعتراض اٹھاتے ہیں۔۔ جن کی نظر اور قلب میں وسعت نہیں ہوتی۔۔۔ ورنہ یہ شعر معرفت کا شعر ہے۔۔۔




دید نے تیرئ کملیاں کیتا
ہوش بھلائی میری.


تمہاری دید نے مجھے پاگل کر دیا ہے
😳 میرے ہوش بھلا دیئے ہیں


دنیا تو بے خبرا ہو کے
بس خبر رئی اے تیری


دیدار کے بعد، میں دنیا سے بے خبر ہو گیا ہوں
بس اک تیری خبر ہے۔۔مطلب بس اب تو ہی ہر طرف نظر آتا ہے🤓 ۔

جیسا کہ اس شعر میں ہے۔۔

تیری یاد میں بیٹھے بیٹھے گم ہو جاتا ہوں
اب میں اکثر میں نہیں رہتا ، تم ہو جاتا ہوں




کر غور ہتھ دیاں انگلیاں تے
ہر اک وچہ فرق ضرور اے


اپنے ہاتھوں کی انگلیوں پہ غور کرو
ہر انگلی کے سائز میں فرق موجود ہے

مطلب پانچوں انگلیاں برابر نہیں والا محاورا



انج فرق اے ساری دنیا وچہ
کوئی ظالم تے کوئی مجبور اے



بلکل اسی طرح دنیا کے تمام لوگوں میں فرق ہے۔۔
کوئی ظلم کرتا ہے، اور کوئی ظلم سہنے پر مجبور اور لاچار ہے


کوئ مر گیا کسے دے پیار وچہ
کوئی بلکل ای مغرور اے



محبت کا بھی یہی معاملہ ہے۔۔۔ کوئی اپنی جان تک اس میں وار دیتے ہیں۔۔ اپنی پوری محبت اور خلوص کسی کے نام کر دیتے ہیں۔۔۔

اور بعض دفعہ بلکہ اکثر اوقات ایسا ہوتا ہے۔۔بلکہ یوں کہیں ہمیشہ ہی ایسا ہوتا ہے کہ جس کے لئے یہ سب کیا جاتا ہے اسے پرواہ تک نہیں ہوتی۔۔وہ بالکل ہی مغرور ہوتا ہے۔۔۔ چاہے جانے کا نشہ انسان کو مغرور کر دیتا ہے۔۔۔ اسی کی طرف اشارہ ہے۔۔۔



کوئی مخلص دل وچہ وسدا اے
کوئی اکھ دی پہنچ توں دور اے



ہمارے دل میں کوئی مخلص ڈیرے ڈالے بیٹھاہے

لیکن وہ آنکھ کی پہنچ سے دور ہے۔۔۔

یہاں ''کوئی'' پنجابی میں ایک ہی شخص کے لئے استعمال کیا گیا ہے۔





کُجھ شوق سِی یار فقیری دا
کُجھ عشق نے دَر دَر رول دِتا



اے دوست۔۔ ہمیں پہلے ہی کچھ فقیری کا شوق تھا
اور کچھ عشق نے ہمیں در در خوار کر دیا ہے۔۔


کُجھ سجنا کَسر نہ چُھوڑی سِی
کُجھ زہر رَقیباں گھول دِتا


کچھ۔۔۔۔ دوستوں نے کسر نہیں چھوڑی ہمارے دل کو دکھانے میں
اور کچھ۔۔۔۔۔ رقیبوں اور دشمنوں نے اذیت کا زہر گھول دیا



کُجھ ہجر فِراق داَ رنگ چٹرہیا
کُجھ دردِ ماہی انمول دِتا


ایک تو ہجر کا رنگ چڑھ گیا ہے
اور کچھ ماہی نے درد بھی بڑا انمول دے دیا۔۔۔

ہمارا فیورٹ شعر ہے۔۔۔

اک درد لاجواب ہے
اک میں بھی بے مثال ہوں


کُجھ سڑ گئی قسمت میری
کُجھ پیار وِچ یاراں رُول دِتا


کچھ پہلے ہی میری قسمت اچھی نہیں تھی
کچھ دوستوں کی محبت نے ہمیں کہیں کا نہیں چھوڑا


کُجھ اونج وِی رہواں اوکھیاں سَن
کُجھ گل وِچ غم داَ طوق وِی سِی

کچھ ویسے بھی راستے بڑے طویل اور مشکل تھے
کچھ ہمارے گلے میں غم کا طوق بھی تھا😢 ۔



یہاں بڑے خوبصورتی سے اذیت کو واضح کیا گیا ہے کہ۔۔۔ ایک تو راستے کی طوالت اور مشکلات اذیت کا سبب ہیں اور دوسرا گلے میں غم کا بھاری طوق ہے جس سے چلنا محال ہے۔۔۔

بالکل ویسے ہی جیسے ایک قیدی کے ہاتھ پاؤں میں بیڑیاں اور گلے میں طوق ڈالا جاتا ہے تاکہ وہ بھاگ نہ سکے۔۔آزاد نہ ہو سکے۔۔۔ اور کبھی آپ نے موویز وغیرہ میں دیکھا ہو، ایسے حالات میں اگر قیدیوں کو سفر کروایا جائے تو ان کے لئے چلنا بہت مشکل ہو جاتا ہے۔۔۔ اتنے وزن کی وجہ سے۔۔


کُجھ شہر دے لوگ وِی ظالم سنَ
کُجھ سانوں مَرن دا شوق وِی سی

ایک تو شہر کے لوگ پہلے ہی سے ظالم تھے۔۔😢 ۔
😜 🤪 اور کچھ ہمیں بھی مرنے کا بہت شوق تھا

مطلب نہلے پہ دہلا۔😜 🤪 ۔۔شہر کے لوگ تو ظالم تھے ہی۔۔لیکن ہمیں بھی مرنے کا بڑا شوق تھا جس کی وجہ سے مزاحمت کرنے کی بجائے ، شوق سے زندگی دے دی۔ 😟 ۔


تباہ ہوئی اودی عمر ساری
جنوں‌عشق نہ ہویا نصیب میاں


اس کی زندگی تباہ ہوگئی

جس کو عشق کی آگ نصیب نہ ہوئی

اردو کا شعر ہے۔۔

گزری ہے جن کی عمر محبت کئے بغیر

وہ بد نصیب مر گئے، گویا جیئے بغیر



اسی شعر کو بعض مقام پہ یوں لکھا گیا ہے۔۔۔


گزری ہے جن کی عمر بصد حسرتِ وصال

وہ بدنصیب مر گئے، گویا جیئے بغیر


😟 ہمیں یہ دوسرے والا شعر زیادہ پسند ہے۔۔اس میں کمال کا تخیل ہے۔۔۔

علامہ اقبال نے بھی فرمایا:

بجھی عشق کی آگ ، اندھیر ہے

مسلماں نہیں، راکھ کا ڈھیر ہے

:( اور ہمارے خیال میں بھی عشق ہی کائینات کے وجود اور حسن کا سبب ہے۔



شکر قند نبات تے شہد کولوں‌
مزا عشق دا بہت عجیب میاں‌



شکر قندی کا تو پتہ ہی ہو گا۔۔۔ یہاں شعر میں روانی رکھنے کے لئے شکر قند لکھا گیا ہے۔۔۔ شعر میں فرمایا گیا ہے کہ عشق کا مزا بہت عجیب ہے۔۔جو شکرقندی اور شہد کی مٹھاس سے بھی بڑھ کر ہے۔۔۔

اگر پورا لفظ شکر قند نبات کہا جائے تو اس سے مراد شائد شاعر نے کوئی بھی میٹھی چیز۔۔یا ایسا پودا جس سے کچھ ایسا پھل ملتا ہے۔۔ لیکن ہمارے خیال میں یہاں شاعر نے صرف شکر قندی سویٹ پوٹیٹو کا ہی ذکر کیا ہے۔۔۔



عاشق ہو کے ویکھ ہدایت اللہ
عشق ترک ملیندا حبیب میاں


یہاں لفظ تَرَک استعمال ہوا ہے۔۔لیکن عام پنجابی میں اسے ''تَڑَک'' بولتے ہیں۔۔۔ اس کا مطلب ہے فورا۔۔۔جیسے انگلش میں ابرَپٹلی۔ ایٹ ونس ۔۔

تو ترجمہ یوں ہوا۔۔۔۔

اے ہدایت اللہ، تم عاشق بن کے تو دیکھو
عشق تو جھٹ پٹ محبوب ملا دیتا ہے۔

شرط یہ ہے کہ عشق سچا اور لگن پکی ہو۔۔۔ جب عشق کا الاؤ اپنی حدوں کو پہنچ جائے۔۔۔ تو منزل بھی مل جاتی۔۔۔ بس عشق کی پہلی منزل لا۔۔۔ اس سفر میں اپنی ذات کی نفی کرنا پڑتی۔۔۔ بس تُو ہی تُو کا ورد😊 ۔۔۔ پھر ایک مقام ایسا بھی آتا ہے جب بس محبوب کی ذآت کے سوا کچھ نظر نہیں اتا۔۔ پھر ایک عاشق کے لئے وصل اور ہجر کوئی معنی نہیں رکھتا۔۔ ہجر میں بھی وصل کا سا سماں رہتا ہے۔۔۔🙃 ۔




بے قدراں نال پیا ودھا کے دکھ اٹھایا بھارا
دل وی ٹٹا ۔ آس وی مکی۔ جا بے قدرا یارا😔 ۔


بے قدروں کے ساتھ دوستی بڑھا کر کچھ حاصل نہیں ہوا۔۔سوائے اس کے کہ بہت ذیادہ دکھ اور اذیت اٹھانا پڑی😔۔
بلکہ الٹا یہ نقصان ہوا کے، دل بھی ٹوٹ گیا۔۔ اور آس بھی ختم ہو گئی۔۔۔ یہاں آس کسی بھی بات کی ہو سکتی۔۔ شائد محبوب سے بدلے میں محبت کی آس ہو۔۔یا شائد اس بات کی آس کہ کبھی تو اسے ہماری محبت کی قدر ہو گی۔۔کچھ بھی ہو سکتا۔

جا بے قدرا یارا۔۔۔!!!!!!!!
اس جملے میں افسوس اور تاسف ہے۔۔ کہ آہ اے دوست۔۔ تمہارے لئے اتنا کچھ کیا اور تم نے اتنی بے قدری کی۔۔۔ یعنی اپنے دکھ کا اظہار کیا گیا ہے کہ۔۔تمام چاہتوں اور خلوص کے باوجود۔ تم اس قدر بے قدرے ثابت ہوئے۔

جیسے وہ شعر ہے

لائی بے قدراں نال یاری
😉 تے ٹُٹ گئی تَڑَک کر کے۔۔





نیچاں دی اشنائی کولوں فیض کسے ناں پایا -
ککر تے انگور چڑھایا ہر گچھا زخمایا



کم ظرف اور گھٹیا لوگوں کی جان پہچان اور دوستی سے آج تک کسی نے فیض نہیں پایا

بالکل ویسے ہی جیسے کیکر پہ انگور لگائیں جائیں تو انگور بھی زخمی ہو جاتے ہیں۔

کیکر جسے ببول بھی کہتے ہیں ۔ اس میں بے شمار کانٹے ہوتے ہیں۔۔ یہ سب ہی جانتے ہیں۔۔۔ لمبے سخت کانٹے۔۔لیکن انگور رس بھرا میٹھا پھل ہے۔۔ نرم و نازک سا، جو بہت جلد زخمی ہو سکتا۔۔ مطلب رپچرینگ سے اس کا رس باہر آ جاتا۔۔۔۔ تو فرمایا یہ گیا ہے کہ اسی طرح دو مختلف نیچر کے لوگ، جس میں سے ایک نرم مزاج، اور خلوص سے بھرپور ہو، اور دوسرا تنک مزاج اور بے مروت ہو تو، نرم دل شخص ہمشہ دکھ ہی اٹھائے گا۔۔۔کیونکہ جیسے کیکر کی فطرت ہمیشہ ایک جیسی رہے گی بالکل ویسے ہی اس شخص کی فطرت بھی نہیں بدلے گی۔۔۔ حتی کہ محبت اور خلوص بھی اس پہ بے اثر رہے گا


دنیا تے جو کم نہ آوے اوکھے سوکھے ویلے -
اس بے فیضے سنگی کولوں بہتر یار اکیلے


ایک ایسا دوست جو دنیا میں مشکل وقت میں کام نہ آئے
اس بے فیض دوست سے بہتر یہی ہے کہ بندہ اکیلا رہے😏 ۔



ساڈے پیار دے پہلے پرچے وچ
مضمون جدائی دا آیا
دل تڑپ تڑپ بےحال تھیا
اکھا ں رو رو حال ونجایا
ہر لفظ دے زیر زبر مینوں
ایہو دکھڑا یار سنایا
. او شاکر لوک تباہ تھی گۓ
جنہاں پیار دا بستہ چایا


اس کا تو سمپل ہے۔۔۔

ہمارے پیار کے پہلے امتحان میں ہی جدائی کا مضمون آ گیا
ہمارا دل تڑپ تڑپ کر بے حال ہو گیا
آنکھوں نے رو رو حآل بیان کیا
ہر لفظ کی زیر زبر نے ہمیں یہی دکھ سنایا
کہ شاکر۔۔۔ وہ لوگ تباہ ہو گئے
جنہوں نے عشق کا بستہ کندھوں پہ ڈالا



ڈیگر ڈھلی تے پیاں شاماں تے پنچھی گھراں نوں آۓ -
💔 اوہ نئیں آۓ فیر محمد.. جیناں نوں موت لے جاوے


سورج غروب ہو رہا ہے، شام ہو گئی، اور پنچھی گھروں کو واپس لوٹ رہے ہیں
بس وہ لوگ واپس نہیں ، جنہیں موت بہت دور لے گئی ہے

یہ قانونِ فطرت ہے کہ شام کے وقت ہر ذی روح اپنے ٹھکانوں پر واپس آ جاتی ہے۔ لفظ محمد سے مراد یہاں محمد بخش ہے۔۔۔ یہاں بہت سے لوگ محمد سے کنفیوز ہو جاتے ہیں۔

نوٹ: اوور رائیٹنگ کا ایرر آ گیا تھا۔۔ اس لئے تھریڈ ہاف ہاف کرنا پڑآ
Very nice @Angela bohat mehnat sy ap ny tarjuma kiya hy zabardast 👍
 
  • Like
Reactions: Angela
Top